ایف آئی اے کو پی ٹی آئی ارکان کیخلاف کارروائی سے روکنے کی استدعا مسترد | اردو میڈیا

admin
admin 21 December, 2022
Updated 2022/12/21 at 11:32 AM
8 Min Read
310955 110106 updates
310955 110106 updates

الیکشن کمیشن نے یہ کہا ہے آپ نے غیرملکیوں سے فنڈز لیے، ایک بات تو طے ہے، الیکشن کمیشن ممنوعہ فنڈزضبط کرسکتا ہے: چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ— فوٹو: فائلاسلام آباد ہائیکورٹ نے ممنوعہ فنڈنگ کیس میں الیکشن کمیشن کی اسکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ کی بنیاد پر وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) کو پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) ارکان کے خلاف کارروائی سے روکنے کی استدعا مسترد کر دی۔اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس عامر فاروق، جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب اور جسٹس بابر ستار پر مشتمل لارجر بینچ نے ممنوعہ فنڈنگ کیس میں الیکشن کمیشن فیصلے کے خلاف پی ٹی آئی کی درخواست پر سماعت کی۔پی ٹی آئی کے وکیل انور منصور نے تحریری دلائل جمع کراتے ہوئے عدالت کو بتایا کہ سپریم کورٹ کے حکم کے مطابق سیاسی جماعتوں کو ملنے والے فنڈزکی اسکروٹنی کی جاتی ہے، الیکشن کمیشن کے پاس انکوائری کا اسکوپ محدود ہے جس سے باہرنہیں جاسکتا۔ان کا کہنا تھاکہ  پی ٹی آئی کو فارن فنڈذ پارٹی ڈکلیئرکرنا بھی الیکشن کمیشن کا اختیارنہیں تھا، الیکشن کمیشن کی جانب سے اختیارات سے تجاوز کا نکتہ بھی اٹھایا گیا ہے، اگر پارٹی کو عطیات میں ملنے والی رقم ممنوعہ فنڈنگ ثابت ہوتواسے ضبط کیا جاسکتا ہے۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ یعنی اگر ایسی کسی رقم کا پتہ چلے تو اسے قومی خزانے میں جمع کرایا جائےگا؟ الیکشن کمیشن نے یہ کہا ہے آپ نے غیرملکیوں سے فنڈز لیے، ایک بات تو طے ہے، الیکشن کمیشن ممنوعہ فنڈزضبط کرسکتا ہے۔ بیرسٹر انور منصور نے کہاکہ  الیکشن کمیشن نے آگے معاملہ وفاقی حکومت کو بھیجنے کا لکھا، اسکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ کی بنیاد پر 185 کیسز بنائے گئے ہیں اور ایف آئی اے کارروائی کر رہا ہے، اسے روکا جائے، الیکشن کمیشن نے شوکازنوٹس بھی جاری کررکھا ہے جس میں آج پیش ہوا، ہمارا کہنا یہ ہے کہ ممنوعہ فنڈنگ اور فارن فنڈڈ پارٹی میں فرق ہے، ملکی سالمیت کیخلاف غیرملکی فنڈنگ سے چلنے والی جماعت کو ہی کالعدم کیا جاسکتا ہے، سپریم کورٹ کو ریفرنس بھیجنے کے لیے ملکی سالمیت کیخلاف کام کرنا ثابت ہونا لازم ہے۔عدالت نے کہا ابھی آپ کے خلاف تو ایسا کچھ نہیں کیا گیا، ابھی تک وفاقی حکومت نے پی ٹی آئی کیخلاف کوئی ریفرنس نہیں بھیجا، اگرحکومت بھیجنا چاہے تو اس کا ایک الگ مکینزم ہے، ریفرنس جائے تو وہاں آپ کو بھی موقع ملنا ہے، ابھی تو آپ کو صرف شوکاز نوٹس جاری کیا گیا ہے جس کے جواب میں آپ اپنی ہرطرح کی وضاحت دے سکتے ہیں۔ جسٹس بابر ستار نے کہا آپ شوکازکے جواب میں الیکشن کمیشن کو سب کیوں نہیں بتا دیتے؟ وکیل پی ٹی آئی نے بتایا کہ ہم نے ایک ابتدائی جواب جمع کروایا اور کہا ہے کہ نوٹس الیکشن کمیشن سے جاری ہی نہیں ہوا، نوٹس ڈی جی لاء کی جانب سے جاری کیا گیا۔انور منصور خان نے کہا کہ انہیں دلائل کے لیے مزید ایک ہفتے کا وقت چاہیے جس پر چیف جسٹس نے کہا آپ کے بعد الیکشن کمیشن کو بھی سننا ہے پھرتویہ کیس جون جولائی تک چلا جائےگا، ہم چاہتے ہیں آپ دلائل مکمل کریں اور جلد فیصلہ ہو اسی لیے تحریری دلائل مانگے گئے تھے۔جسٹس میاں گل حسن اورنگ زیب نے ریمارکس دیے کہ الیکشن کمیشن نے کہیں نہیں لکھا پی ٹی آئی ملکی سالمیت کیخلاف ہے، الیکشن کمیشن رپورٹ میں پارٹی کالعدم قراردینے کا ریفرنس بھیجنے کا جوازنہیں۔کیس کی مزید سماعت 10 جنوری تک ملتوی کردی گئی

Request to stop FIA from taking action against PTI members rejected Urdu Media

The Election Commission has said that you took funds from foreigners, one thing is certain, the Election Commission can confiscate prohibited funds: Chief Justice Islamabad High Court – Photo: File Islamabad High Court reported to the Election Commission’s Scrutiny Committee in the case of prohibited funding. The request to stop the Federal Investigation Agency (FIA) from taking action against Pakistan Tehreek-e-Insaf (PTI) members was rejected on the basis of Islamabad High Court Chief Justice Amir Farooq, Justice Mian Gul Hasan Aurangzeb and Justice Babar Sattar. The larger bench heard the PTI’s petition against the Election Commission’s decision in the prohibited funding case. PTI’s lawyer Anwar Mansoor, while submitting written arguments, told the court that according to the order of the Supreme Court, political parties received Funds are scrutinized, the Election Commission has a limited scope of inquiry which cannot go beyond it. He said that it was not the Election Commission’s authority to declare PTI as a foreign-funded party. has been raised, if the amount received in donations to the party is acceptable Funding can be confiscated if proven. The Chief Justice remarked that if any such money is found, it will be deposited in the national treasury? The Election Commission has said that you took funds from foreigners, one thing is certain, the Election Commission can confiscate the prohibited funds. Barrister Anwar Mansoor said that the Election Commission has written to forward the matter to the Federal Government, based on the report of the Scrutiny Committee, 185 cases have been made and the FIA is taking action, it should be stopped, the Election Commission has also issued show notes. In what happened today, we say that there is a difference between banned funding and foreign-funded party, only a foreign-funded party can be annulled against the country’s integrity. It must be. The court said that nothing has been done against you yet, the federal government has not sent any reference against PTI, if the government wants to send it, it has a separate mechanism. There is an opportunity, now you have only been issued a show cause notice in response to which you can give all your explanations. Justice Babar Sattar said why don’t you tell everything to the Election Commission in response to the show cause? The lawyer PTI said that we submitted a preliminary reply and said that the notice was not issued by the Election Commission, the notice was issued by DG Law. Anwar Mansoor Khan said that they have one more time for arguments. The time of the week is required, on which the Chief Justice said that after you, the Election Commission also has to hear, then this case will go on till June-July. Aurangzeb remarked that the Election Commission has not written anywhere that PTI is against the integrity of the country, there is no justification for sending a reference to annul the party in the Election Commission report. Further hearing of the case was adjourned till January 10.

Share this Article
Leave a comment

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *